Gham ideas | urdu poetry, deep words, urdu quotes

غم بنا تو دو لفظوں سے ہے
لیکن اس کو بیان کرنے کے لیے ہزار لفظ بھی کم ہی

gham bana to do lafzon se hai
lekin is ko bayan karne ke liye hazaar lafz bhi kam hain

اپنا غم سنانے کو جب نہ ملا کوئی تو
رکھ دیا آئینہ سامنے اور خود کو رولا دیا

apna gham sunanay ko jab nah mila koi to
rakh diya aaina samnay aur khud ko raula diya

ظرف ہو تو غم بھی ایک نعمت ہے خدا کی
جو سکون رونے میں ہے وہ مسکرانے میں کہاں

zarf ho to gham bhi aik Nemat hai kkhuda ki
jo sukoon ronay mein hai woh muskurany mein kahan

مجھے غم ہے کہ میں نے زندگی میں کچھ نہیں پایا
یہ غم بھی دل سے نکل جاے اگر تم ملنے آ جاؤ

mujhe gham hai ke mein ne zindagi mein kuch nahi paaya
yeh gham bhi dil se nikal jaye agar tum milnay aa jao

دنیا بدل گئی تھی کوئی غم نہ تھا
مجھے تم بھی بدل گئے تھے یہ حیرانی کھا گئی

duniya badal gayi thi koi gham nah tha
mujhe tum bhi badal gaye thay yeh herani kha gayi

جانتا ہوں میں بھی اک اسے شخص کو
غم سے پتھر ہو گیا لیکن کبھی رویا نہیں

jaanta hon mein bhi ik usay shakhs ko
gham se pathar ho gaya lekin kabhi roya nahi

غم کو ہنس کے گلے لگا لیتے،
درد سہہ کر بھی ہم مسکُرا لیتے
دل کی یہ آرزو رہی دل میں،
کاش کہ تم وفا نبھا لیتے

gham ko hans ke gilaay laga letay ,
dard seh kar bhi hum muskura letay
dil ki yeh arzoo rahi dil mein ,
kash ke tum wafa nibha letay

مجھ سے بچھڑیں گے تو کہاں جائیں گے؟
میرے غم عزیز مجھے بچوں کی طرح ہیں

mujh se bichreen ge to kahan jayen ge ?
mere gham Aziz mujhe bachon ki terhan hain .

‏زوال آتا ہے ہر شے پہ یہ سنا تھا مگر۔۔۔۔
ہمارے غم کو مسلسل عروج حاصل ہے

ناراض ہمیشہ خوشیاں ہی ہوتی ہیں
غموں کے اتنے نخرے نہیں ہوتے

naraaz hamesha khusihyan hi hoti hain
gamoon ke itnay nahkre nahi hotay

غم اتنے ہیں کہ ہم زندگی کو نہیں
بلکہ زندگی ہمیں جی رہی ہے

gham itnay hain ke hum zindagi ko nahi
balkay zindagi hamein jee rahi hai

کانٹوں میں گزار دیتا ہے گلاب اپنی زندگی
کون کہتا ہے کہ پهولوں کی زندگی میں کوئی غم نہیں ہوتا

کاش غم اور خوشی کی بھی کوئی دکان ہوتی
ہم اپنی ساری خوشیاں بچ کر تیرے غم خرید لیتے

kash gham aur khushi ki bhi koi dukaan hoti
hum apni saari khusihyan bach kar tairay gham khareed letay

سارے ماحول میں خوشبو ہے تری یادوں کی
ہم نے غم خانے کو خوشبو سے سجا رکھا ہے

saaray mahol mein khushbu hai tri yaado ki
hum ne gham khanaay ko khushbu se saja rakha hai

میں نے دروازے پہ تالا بھی لگا کر دیکھا غم
مگر پھر بھی سمجھ جاتے تھے میں گھر میں ہوں

mein ne darwazay pay tala bhi laga kar dekha gham
magar phir bhi samajh jatay thay mein ghar mein hon

اک تیرا غم جو پال بیٹھی ہوں۔
دیکھ کتنی نڈھال بیٹھی ہوں ۔

ik tera gham jo paal baithi hon .
dekh kitni nidhaal baithi hon .

غم کی زبان بولی تو میرے آنسو نکل گۓ
بہت سے اپنے تھے جو اب بچھڑ گۓ

آیا تھا ایک شخص میرے درد بانٹنے
رخصت ہوا تو اپنا بھی غم مجھے دے گیا

aaya tha 1 shakhs mere dard baantane
rukhsat sun-hwa to apna bhi gham mujhe day gaya

خوشی کہاں ہم تو غم چاہتے ہیں
خوشی تو اسے دے دو جسے ہم چاہتے ہیں

khushi kahan hum to gham chahtay hain
khushi to usay day do jisay hum chahtay hain

Leave A Reply

Please enter your comment!
Please enter your name here