امیر ماں غریب ماں

ایک دن، ایک گاؤں کے قریب ایک امیر ماں اور ایک غریب ماں رہتی تھیں۔ امیر ماں کا نام ماہین تھا اور وہ ایک خوشحال خاندان کی اراکین تھیں۔ ان کے پاس سب کچھ تھا جو کوئی بھی چاہتا تھا، لیکن ان کے دل میں ایک خالی جگہ تھی، جو وہ پیار اور خوشی کی تلاش میں تھیں۔

دوسری طرف، غریب ماں کا نام نسیم تھا، اور وہ اپنے دو بچوں کے ساتھ ایک چھوٹے سے جھونپڑے میں رہتی تھیں۔ ان کی زندگی مشکلوں سے بھرپور تھی، لیکن ان کے دل میں ایک پیار کی بھرمار تھی جو ان کو محبت اور خوشی کے ساتھ جینے کی طاقت دیتی تھی۔

ایک دن، گاؤں میں ایک بڑا میلہ لگا، جس میں لوگوں نے خریداری کیلئے اشیاء بیچنی شروع کیں۔ امیر ماں ماہین نے اپنے بچوں کو لے کر میلے کی طرف رخ کیا، جبکہ غریب ماں نسیم اپنے بچوں کے ساتھ میلے کی دوسری طرف رخ کیا۔

میلے کی شورشرابہ میں امیر ماں کے بچے اپنی ماں سے ایک پیاری کھلونے کی درخواست کرنے لگے۔ امیر ماں نے خوشی سے ان کی درخواست پر عمل کیا اور ایک جیب میں سے پیسے دے کر کھلونا خرید لیا۔

اسی دوران، نسیم کے بچے اپنی ماں سے ایک کھلونے کی درخواست کرتے ہیں، لیکن نسیم کے پاس پیسے نہیں تھے۔ وہ بہت پریشان ہوگئیں کیونکہ وہ اپنے بچوں کے لئے کچھ کر نہ سکیں۔

امیر ماں نے نسیم کو پریشان دیکھا اور دل کے کریب سے ایک کھلونا نکلایا جو ان کے بچوں نے چاہا تھا۔ امیر ماں نے نسیم کے بچوں کو خوشی خوشی کھلونے دیے اور نسیم کی آنکھوں میں آنسوں کی بوندیں چمکنے لگیں۔

اس دن کے بعد، امیر ماں اور غریب ماں کے درمیان ایک گہری دوستی کا رشتہ قائم ہوا۔ امیر ماں نے سمجھا کہ حقیقی خوشی اور پیار ایک دوسرے کو مدد کرنے میں ہوتا ہے، نہ کہ مال و دولت کی بھاگ دوڑ میں۔ ان کی زندگیوں میں ایک نئی شروعات کی شمع روشن ہوئی، جو دوستی اور محبت کی روشنی میں چمکتی رہی۔

یہ داستان ہمیشہ یاد دلاتی ہے کہ حقیقی دولت اور خوشی ان دلوں میں ہوتی ہے جو دوسروں کی مدد کرنے اور اپنی کمیوں کو پورا کرنے کی کوشش کرتے ہیں۔ امیری اور غریبی کا فرق سرف مال و دولت میں نہیں، بلکہ دل کی امیری اور غریبی میں

ہوتا ہے۔

Leave A Reply

Please enter your comment!
Please enter your name here